یورپین یونین پارلیمنٹ میں بھارت کے متنازع شہریت ایکٹ کے خلاف قراردادیں پیش

european-union-parliament

یورپی پارلیمان کے پانچ گروپوں نے بھارت کے متنازع شہریت ترمیمی ایکٹ (سی اے اے) کے خلاف پانچ قراردادیں پیش کی ہیں جن میں اس قانون کو خطرناک اور عوام کو باٹنے والا قرار دیا گیا ہے۔ ان قراردادوں پر 29 اور 30 جنوری کو بحث اور ووٹنگ ہو گی۔

دو قراردادوں میں کہا گیا ہے کہ سی اے اے شہریت کے تعین کے طریقے میں خطرناک تبدیلی کی نشاندہی کرتا ہے اور اس سے دنیا میں بے وطنی کا سب سے بڑا بحران پیدا ہو جائے گا۔

ان پانچ گروپوں میں 751 رکنی یورپی پارلیمان کے 559 ارکان شامل ہیں۔

ایک قرارداد میں کہا گیا ہے کہ مذکورہ قانون سے مسلمانوں کو الگ رکھا گیا ہے جس کی وجہ سے عالمی سطح پر بھارت کی ساکھ اور داخلی استحکام کے حوالے سے منفی نتائج برآمد ہوں گے۔

ایک دوسری قرارداد میں پناہ گزینوں سے متعلق پالیسی میں مذہبی پیمانہ اختیار کیے جانے کی مذمت کی گئی ہے۔

ایک گروپ کی جانب سے جس میں 66 ارکان پارلیمان شامل ہیں، پیش کردہ قرارداد میں سی اے اے کی حمایت کی گئی ہے لیکن اس کی مخالفت کرنے والوں کے خلاف سیکیورٹی فورسز کی جانب سے طاقت کے زیادہ استعمال کی غیر جانبدارانہ تحقیقات کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے۔

یہ قراردادیں ایسے وقت پیش کی گئی ہیں جب دو ماہ سے بھی کم مدت میں، یعنی 13 مارچ کو وزیر اعظم نریندر مودی انڈیا یورپی یونین سربراہ کانفرنس میں شرکت کے لیے برسلز جانے والے ہیں۔

ذرائع

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *