کلبھوشن یادو کیس، پاکستان کے حتمی دلائل مکمل

icj-pakistan-india-kulbhushan-yadav-22022019

بین الاقوامی عدالت انصاف میں مبینہ بھارتی جاسوس کلبھوشن یادو کیس میں آج جمعرات کے روز پاکستانی وکلاء نے اپنے حتمی دلائل مکمل کر لئے جس کے بعد عدالت نے کیس پر فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔

دلائل کے آخری دن آج پاکستان سے تعلق رکھنے والے عالمی عدالت انصاف کے جج جسٹس تصدق حسین جیلانی بھی عدالت میں موجود تھے۔ اس سے قبل منگل کے روز مقدمے کی سماعت کے دوران اُن کی طبیعت اچانک خراب ہونے کے سبب اُنہیں ہسپتال منتقل کر دیا گیا تھا، جہاں ڈاکٹروں نے بتایا کہ اُنہیں نمونیا ہو گیا تھا۔

پاکستان کے وکیل خاور قریشی نے اپنے دلائل مکمل کرتے ہوئے عدالت سے استدعا کی کہ اس کیس کو ناقابل سماعت قرار دیتے ہوئے خارج کیا جائے۔ اُنہوں نے کہا کہ بھارتی ٹیم اپنے نیول کمانڈر کلبھوشن یادو کی طرف سے پاکستان میں جاسوسی اور تخریب کاری کے اقدامات کے حوالے سے کوئی جواب دینے سے قاصر رہی ہے۔

خاور قریشی کا کہنا تھا کہ اس کیس میں بھارت کا مؤقف قانونی طور پر آج بھی اتنا ہی کمزور ہے جتنا 8 مئی، 2017 کو تھا۔ اُنہوں نے کہا کہ بھارت اُن کے دلائل پر بے جا اعتراضات کرتا رہا ہے اور بھارتی وکیل نے غیر متعلقہ باتیں کرتے ہوئے عدالت کی توجہ اصل کیس سے ہٹانے کی کوشش کی ہے۔

عالمی عدالت انصاف کا کہنا تھا کہ اگر ضرورت پڑی تو فریقین کو مزید دلائل کیلئے دوبارہ طلب کیا جا سکتا ہے۔

مزید تفصیلات

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *